فضائی آلودگی سے جرائم میں اضافہ

انسانی صحت پر فضائی آلودگی کے منفی اثرات کے بارے میں بہت کچھ جانا جا چکا ہے۔ ہم جانتے ہیں کہ فضائی آلودگی کا بڑھنا سانس کی انفیکشن، دل کے امراض، دل کا دورہ اور پھیپھڑوں کے کینسر کے ساتھ ساتھ حافظے کی کمزوری اور الزائمر جیسے امراض کا باعث بنتا ہے۔ لیکن اب شواہد آنے شروع ہوئے ہیں کہ فضائی آلودگی صرف صحت کو نقصان نہیں پہنچاتی بلکہ یہ ہمارے کردار پر بھی اثر انداز ہوتی ہے۔ 1970ء کی دہائی میں ریاست ہائے متحدہ امریکا میں پیٹرول میں سے سیسہ ختم کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔ اس کی وجہ یہ تشویش تھی کہ گاڑیوں سے نکلنے والا اس پیٹرول کا دھواں بچوں کی سیکھنے کی صلاحیت اور ذہانت میں کمی جیسے مسائل پیدا کر رہا ہے۔دھویں میں شامل سیسہ کے بذریعہ سانس جسم میں داخل ہونے سے اضطراب و جارحیت بڑھ رہی تھی اور بچوں کا آ?ئی کیو کم ہو رہا تھا۔ 1990ء کی دہائی میں پیٹرول میں سے سیسے کو نکالنے کو پرتشدد جرائم میں56 فیصد کمی کی وجہ بتایا جاتا ہے۔ چین کے شہر شنگھائی میں مشاہدہ کیا گیا ہے کہ آلودہ فضا، بالخصوص جس میں سلفر ڈائی آکسائیڈ ہو، سانس کے ذریعے لینے سے ذہنی خلل کے سبب ہسپتالوں میں داخلہ بڑھ جاتا ہے۔ امریکی شہر لاس اینجلس پر ہونے والی ایک تحقیق کے مطابق فضا میں آلودگی کے اجزا کی بڑھوتری شہروں کے مضافات میں نوعمروں میں جرائم کے رجحان کو بڑھا دیتی ہے۔ یہ رویے اس لیے بھی پیدا ہوتے ہیں کیونکہ فضائی آلودگی سے (غیر محسوس انداز میں ) والدین اور بچوں میں تعلق کمزور پڑتا ہے اور والدین کو سماجی اور ذہنی دباو کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ اب یہ مانا جاتا ہے کہ آلودہ فضا میں سانس لینے سے دماغ کے اندر سوزش ہوتی ہے۔ فضا میں موجود انتہائی باریک ذرات نمو پانے والے دماغ اور نیوراتی نظام کو نقصان پہنچاتے ہیں اور پھر کردار کو متاثر کرتے ہیں۔

جرائم:اب تک کے حاصل کردہ شواہد کے مطابق فضائی آ?لودگی میں کرداری خرابی پیدا کرنے کی ’’صلاحیت‘‘ موجود ہے۔ اس کا خاص اثر نوعمروں پر پڑتا ہے۔ لیکن چند تحقیقات کے مطابق اس کے اثرات اس سے بھی بڑھ کر ہیں۔ امریکا کے 9,360 شہروں پر ہونے والی ایک تحقیق کے مطابق فضائی آلودگی سے جرائم میں اضافہ ہوا۔ فضائی آلودگی سے تشویش یا اینگزائٹی میں اضافہ ہوتا ہے جس کے نتیجے میں لوگ جرائم اور غیراخلاقی رویوں کی جانب راغب ہوتے ہیں۔ اس تحقیق کے مطابق جن شہروں میں فضائی آلودگی زیادہ ہے وہاں جرائم کی شرح بھی زیادہ ہے۔ برطانیہ میں ہونے والی ایک حالیہ تحقیق ہمیں اس موضوع پر مزید تفصیلات فراہم کرتی ہے۔ اس میں لندن میں دو سال (2004-5ء) کے دوران رپورٹ ہونے والی18 لاکھ قانون کی خلاف ورزیوں کے ڈیٹا کا لندن کے بَرگز اور وارڈز میں آلودگی سے موازنہ کیا گیا۔ اس تجزیے میں درجہ حرارت، نمی اور بارش، ہفتے کے دنوں اور مختلف موسموں کو مدنظر رکھا گیا۔ ’’فضائی معیار انڈیکس‘‘ یہ رپورٹ کرتا ہے کہ فضا ہر روز کتنی ا?لودہ یا صاف ہے۔ تحقیق کرنے والوں کو معلوم ہوا ہے کہ اس انڈیکس میں 10پوائنٹ کے اضافے سے جرائم کی شرح 0.9 فیصد بڑھ جاتی ہے۔ اس لیے لندن کے زیادہ آلودہ علاقوں میں جرائم بھی زیادہ ہیں۔ تحقیق سے معلوم ہوا کہ فضائی آ?لودگی جرائم کی شرح کو لندن کے امیر ترین اور غریب ترین علاقوں میں متاثر کرتی ہے۔

اس تحقیق سے یہ امر خاص طور پر سامنے ا?یا کہ فضائی ا?لودگی سے چھوٹے جرائم بڑھتے ہیں مثال کے طور پر کسی دکان سے چوری یا جیب کاٹ لینا۔ لیکن اس سے بڑے اور سنگین جرائم پر اثر نہیں پڑتا جیسا کہ قتل، ریپ یا شدید زخمی کرنا۔

دباو: خراب فضا دبائو کے ہارمون کورٹیسول کی سطح بڑھا سکتی ہے۔ اس سے درپیش خطرے کا ادراک متاثر ہوتا ہے۔ یوں یہ نتیجہ نکالا گیا ہے کہ قدرے بے خطر ہو کر لوگ جرائم کی جانب مائل ہوتے ہیں۔ محققین کے مطابق فضائی آلودگی کو کم کرکے جرائم کی سطح کو بھی کم کیا جا سکتا ہے۔ تاہم سماجی اور ماحولیات عوامل مل کر لوگوں کے کردار کو متاثر کر تے ہیں۔ اب یہ مزید واضح ہوتا جا رہا ہے کہ آلودہ فضا کے اثرات صرف صحت اور ماحول پر نہیں پڑتے۔ اگرچہ بعض ممالک میں فضائی آلودگی زیادہ ہے لیکن عالمی ادارہ صحت کے مطابق دنیا کے ہر دس میں سے نو افراد زہریلی فضا میں سانس لے رہے ہیں۔ صحت اور کردار پر اس کے اثرات کے بارے میں جاننے کے لیے بہت کچھ کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ بھی دیکھنے کی ضرورت ہے کہ اس کا صنف، عمر، طبقہ، آمدنی اور جغرافیے کے لحاظ کیا اثر پڑتا ہے۔

Electrolux