90کی دہائی میں عالمی کرکٹ کاسب سے خطرنا ک ترین اوپننگ بیٹسمین سعید انور

آج کے دورمیں شائقین کرکٹ انتہائی تیزرفتارکرکٹ پسندکرتے ہیں اسی وجہ سے ٹی ٹوئنٹی کرکٹ دنیابھرمیں مقبول ہے ۔ اسی تیزرفتار ی کومدنظررکھتے ہوئے ون ڈے کرکٹ پربھی اس کارنگ چڑھتا ہوانظرآتا۔اس بات سے بہت کم لوگ واقف ہیں کہ ابتداء میں ون ڈے کرکٹ میچ ساٹھ اوورپرمشتمل ہواکرتاتھاپھررفتہ رفتہ وقت کی کمی کودیکھتے ہوئے اسے پچاس اوورتک محدودکیاگیا۔اس دورمیں عالمی کرکٹ پرکئی ستارے ابھرے ۔ ون ڈے کرکٹ کی ابتداء میں کسی بھی ٹیم کے لیے ایک اننگ میں دوسورنزکامجموعہ ترتیب دیناناممکن تھا۔ پھررفتہ رفتہ اس طرزکی کرکٹ میں تیزی آتی گئی اوراسکوتین سوکاہندسہ کراس کرنے لگا۔اس دورمیں یوں توکئی پاکستانی بلے بازوں نے عالمی کرکٹ کے افق پراپنانا م بنایا انہی میں ایک نام سعیدانورکابھی ہے۔

سعید انور 90 کی دہائی کا کرکٹ کی دنیا کا بلامبالغہ سب سے خطرناک اوپننگ بیٹسمین ہوا کرتا تھا۔ دنیا کی تمام ٹیموں کے خلاف، تمام گراؤنڈز میں اس نے ہر باؤلر کی کھل کر دھلائی کی۔ یوں تواس نے تمام کرکٹ ٹیموں کے خلاف رنزکے انبارلگائے لیکن بھارت کے خلاف ہمیشہ اس نے ایسی کاکردگی کامظاہرہ کیاکہ بھارتی سورمائوں کود ن میں تارے دکھادیئے۔ بھارت کی سرزمین 194رنزکی اننگ طویل عرصے تک عالمی ون ڈے کرکٹ کاسب سے بڑااسکورہا۔ جسے نئی صدی میں سچن ٹنڈولکرنے توڑا۔

سعید انورنے ون ڈے کے علاوہ ٹیسٹ کرکٹ میں بھی اپنی بیٹنگ کے جوہردکھائے اوربھرپوردادوصول کی ۔90 کی دہائی میں ہی وسیم اکرم کے کپتانی سنبھالتے ہی ہماری ٹیم کو میچ فکسنگ کے الزامات کی زدمیں رہی کہاجاتاہے ہماری ٹیم کے 4 سے 6 ایسے کھلاڑی ایسے تھے جو ہر وقت بکیوں کے ساتھ رابطے میں رہتے تھے۔

ان الزامات کواس وقت تقویت ملی جب 1999 کے ورلڈ کپ میں وسیم اکرم کی کپتانی میں پاکستانی ٹیم ہارٹ فیورٹ کی حیثیت سے شریک ہوئی اور لیگ میچوں میں تمام ٹیموں کو ہراتی ہوئی فائنل میں پہنچ گئی جہاں اس کا مقابلہ آسٹریلیا سے تھا۔اس میچ میں بھی پاکستان کو تمام بکیوں نے فیورٹ قرار دیا۔ پاکستانی ٹیم جب بیٹنگ کرنے آئی تو اوپنر سعید انور اپنے روائتی انداز میں کھیل رہا تھا۔ پھر چند اوورز کے بعد اچانک اس نے اپنے بیٹ کی گرپ کو اوپر نیچے کرنا شروع کردیا۔ ایک دو گیندیں کھیلنے کے بعد اس نے پویلین کی طرف اشارہ کیا اور پھر بارھواں کھلاڑی ایک نیا بیٹ لے کر اس کے پاس آگیا، چند سیکنڈ کھسر پھسر ہوئی اور دنیا نے یہی سمجھا کہ پویلین سے کچھ انسٹرکشنز ملی ہیں۔ اگلی گیند پر سعید انور ایک غیرضروری شارٹ کھیلتے ہوئے آؤٹ ہوگیا۔ پھر ہماری ٹیم کی لائین لگ گئی اور ہم یہ فائنل یکطرفہ مقابلے کے بعد ہار گئے۔کہاجاتاہے کہ اس میچ سے سعیدانور سمیت ٹیم کے اہم کھلاڑیوں نے کروڑوں روپے بنائے۔

اس میچ کے کچھ عرصے بعد سعید انور کی چھ سالہ بیٹی کو ایک موذی مرض نے گھیر لیا اور وہ معصوم بچی چند ہفتوں کے اندر اندر اللہ کو پیاری ہوگئی۔ سعید انور کو اپنی اس بچی کی ناگہانی موت نے اندر سے توڑ پھوڑ دیا۔ وہ انتہائی خطرناک حد تک ڈپریشن کا شکار ہوگیا اور اس نے ایک آدھ مرتبہ خودکشی کی کوشش بھی کی۔ پھر اس کا ایک دوست اسے ایک دن شب جمعہ تبلیغی مرکز پر لے گیا۔ سعید انور نے رات وہیں گزاری اور بہت دنوں بعد اسے سکون قلب حاصل ہوا۔ اس رات سعید انور کی کایا پلٹ گئی اور اس نے اللہ سے اپنے گناہوں کی معافی مانگی اور مکمل طور پر تبلیغ کے لیے وقف ہوگیا۔

سعید انور نے اپنے قریبی دوستوں بشمول ثقلین مشتاق، مشتاق احمد، انضمام اور وقار یونس کو بھی دین کی طرف راغب کرلیا اور یوں ہماری ٹیم میں چھوٹی چھوٹی داڑھیاں رکھے، نماز پڑھنے والے کھلاڑیوں کی تعداد بڑھ گئی۔

انہیں دنوں جنید جمشید بھی ہر طرح سے نقصان میں جارہا تھا اور اس کا دل بھی میوزک سے اچاٹ ہونے لگا۔ وہ ایک مشترکہ دوست کے ذریعے سعید انور سے ملا اور پھر جنید جمشید کی کایا بھی پلٹ گئی۔پاکستانی کرکٹ ٹیم کایہ عظیم بلے بازجس کی دہشت سے گرائونڈمیں بڑ ے بڑے بائولرلرزاکرتے تھے اوروہ ان کی جم کردھلائی کرتاتھا ۔ دعوت تبلیغ کے کام سے وابستہ ہے اورلوگو ں کوصراط مستقیم کی طرف راغب کررہاہے ۔

Electrolux