چین افغانستان میں فوجی اڈا تعمیر کرے گا،بات چیت کا عمل جاری

افغانستان اور چین کے درمیان واخان کی شمالی افغان پٹی میں ایک چینی فوجی اڈے کے مبینہ قیام کے حوالے سے دونوں ممالک کے درمیان بات چیت کی خبریں زیر گردش ہیں،فرانسیسی خبررساں ادارے کے مطابق چین کی اس حوالے سے افغان حکومت کے ساتھ بات چیت چل رہی ہے۔ کچھ تجزیہ نگاروں کے خیال میں چین افغانستان کے استحکام میں اس لیے دلچسپی لے رہا ہے کہ وہ اس امن کی بدولت اپنے لیے معاشی فائدے اٹھانا چاہتا ہے۔ کابل سے تعلق رکھنے والے تجزیہ نگار واحد اللہ عزیزی نے اس حوالے سے بتایا ہے کہ چین افغانستان میں استحکام کے لیے بہت کچھ کر سکتا ہے۔ بیجنگ اس پوزیشن میں ہے کہ وہ طالبان اور دوسرے مسلح گروہوں کو مذاکرات کی میز پر لا سکے۔ افغانستان میں امن سے چین کو یہ فائدہ ہو گا کہ وہ لوگر صوبے میں تانبے کی کان کنی شروع کر سکے گا، جو کافی عرصے سے رکی ہوئی ہے۔اس کے علاوہ ملک کے دیگر علاقوں میں بھی وہ ایسے ہی دوسرے منصوبے بھی شروع کر سکے گا۔ افغانستان میں کان کنی کے کاروبار میں مواقع بہت ہیں لیکن ان کے لیے امن بھی ضروری ہے۔
Electrolux